مرجع عالیقدر دام ظلہ الوارف کی خدمت میں سویڈش ترقیاتی وفد عراقی عوام کی ثقافت اور اسکی شناخت و پہچان میں کسی طرح کی دخل اندازی قابل قبول نہیں ہے

مرجع عالیقدر دام ظلہ الوارف کی خدمت میں سویڈش ترقیاتی وفد عراقی عوام کی ثقافت اور اسکی شناخت و پہچان میں کسی طرح کی دخل اندازی قابل قبول نہیں ہے

5/1/2022




مرجع مسلمین و جہانِ تشیع حضرت آیۃ اللہ  العظمیٰ الحاج حافظ بشیر حسین نجفی دام ظلہ الوارف  نے  مرکزی  دفتر  نجف اشرف  میں  ملاقات کو آئے  سالار( مقامی و صوبائی  سویڈش ترقیاتی تنظیم ) کے سربراہ  گونر ایڈرسن اور  مشرق وسطیٰ کے امور  کی ڈائریکٹر و سویڈش انسٹی ٹیوٹ آف  انٹرنیشنل افیئرز  کے عیدیداروں  پر مشتمل وفد   سے اپنے خطاب میں فرمایا کہ   مرجعیت اور حوزہ علمیہ   کی    کوشش ہر چیز  سے پہلے  یہ ہے  کہ  وہ انسان  کو انسان   بنائے  رکھنے  کی  کوششیں کرتی رہے     اور اس کے  ساتھ ساتھ  یہ  بھی  کوشش  ہے کہ    جیسا سلوک  جانوروں اور وحشیوں  کے ساتھ کیا جاتا  ہے  اس طرح طاقت، ذبردستی  اورخوف دلاکر  عوام کی اہانت نہ کی  جائے ،  یہی  نبیوں  علیھم السلام  اور ہمارے  نبی ؐ کا پیغام تھا    اور جس کو خود  نبی اکرم ؐ  نے  بھی  بیان فرمایا  ہے کہ  خداوندعالم نے  مجھے انسان کو خدا  کی  بندگی کے  ساتھ اخلاق   و رستگاری کے  سانچے  میں ڈھالنے  کے لئے  بھیجا ہے۔  ہماری  پوری کوشش ہے کہ  اصلاح  نفس  کو یقینی  بنایا جائے  اس لئے  کہ  اصلاح عمل کا دارو مدار اسی پر ہے  ۔
عراق اور سویڈن  کے  آپسی  روابط  کے  ضمن میں  انہوں نے  فرمایا کہ  ہر وہ کوششیں   کہ جس  میں  مشترک عوامل  کو مد نظر  رکھتے  ہوئے   دونوں  ممالک کی عوام  کے حق میں  ہو ہم ہر ان کوششوں کا خیر مقدم کرتے ہیں  انہوں  نے  اقتصادی  روابط  کو مزید  مضبوط کرنے  پر تاکید فرماتے  ہوئے  کہا کہ  یہ  دونوں  ملکوں   کی عوام  کے  حق  میں ہے  انہوں  نے نصیحت  کرتے ہوئے  فرمایا کہ عراقی  عوام  کی  ثقافت  اور اسکی  شناخت  و  پہچان  میں  کسی  طرح  کی دخل اندازی  قابل قبول  نہیں بلکہ  عراق  کی استقلالیت، سیادت   کو خارجی  طاقتوں  کی  طرف سے  دخل  اندازی  سے  محفوظ  رکھنے میں عراق کی  مدد کی جانی چاہئے  ۔
 اپنی جانب سے مہمان  وفد  نے مرجع عالی  قدر دام ظلہ الوارف کا قیمتی  وقت  دینے  پر شکریہ  ادا کیا  اور کہا  کہ  مرجعیت  نجف اشرف  عراق بلکہ  عالمی  طور  پر اہمیت  کی  حامل  ہے  اس لئے  کہ  روحانی  طور  پر اس مرجعیت   کا دائرہ  بہت  وسیع  ہے ۔